پراسیکیوٹرجنرل

پراسیکیوٹرجنرل نیب کی عدم تعیناتی ، سپریم کورٹ نے حکومت سے کل تک تحریری جواب طلب کر لیا

اسلام آبادپراسیکیوٹرجنرل نیب کی عدم تعیناتی پرازخود نوٹس کی سماعت کے دوران سپریم کورٹ نے حکومت سے تحریری جواب طلب کر لیا اور سیکرٹری قانون کوتمام دستاویزات کے ساتھ تحریری جواب کل تک جمع کرانے کا حکم دے دیا۔
دوران سماعت چیف جسٹس ثاقب نثار نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ پراسیکیوٹرجنرل کی عدم تقرری سے نیب کے قانونی معاملات رکے ہوئے ہیں،حکومت کوادراک ہونا چاہئے کہ 2 ماہ سے پراسیکیوٹرجنرل کاعہدہ خالی ہے،چیف جسٹس آف پاکستان نے کہا کہ 2 ماہ میں تقرری نہ ہوسکی ،آئندہ کیا امید کریں۔

چیف جسٹس ثاقب نثار نے سیکرٹری قانون سے استفسار کیا کہ سیکرٹری صاحب !یہ بتائیں ہم اس معاملے پرکیاحکم جاری کریں؟،اس پر سیکرٹری قانون نے کہا کہ نامزدگیوں کے معاملے پرچیئرمین نیب سے مشاورت کرتا ہوں،اس معاملے میں میراکردارانتہائی محدود ہے، چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ ہمیں معلوم ہے آپ فیصلہ سازشخصیت نہیں،تقرری حکومت نے کرنی ہے،اگر اس نے نہیں کی توہمیں دیکھنا ہوگا،عدالت کو تقرری اور نوٹیفکیشن کا یقین دلایا گیا تھا۔
چیف جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ صدر مملکت نے کس اختیار کے تحت نام تجویز کئے؟،صدر مملکت کے پاس اختیار نہیں تھا کہ وہ ایڈوائس مسترد کرتے۔
سپریم کورٹ نے سیکرٹری قانون کوتمام دستاویزات کے ساتھ تحریری جواب جمع کرانے کا حکم دیتے ہوئے سماعت کل تک ملتوی کردی۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here